مرثیہ بر وفات حضرت مولاناولی رحمانی

0
121
مرثیہ بر وفات حضرت مولاناولی رحمانی

ملت کے تھے جو قائد و رہبر چلے گئے
علم وعمل کے زہد کے پیکر چلے گئے

ماتم کناں فلک ہے زمیں اشکبار ہے
دین نبی کے داعی و مظہرچلے گئے

دنیاۓ علم و دیں میں ہے ہر سو سکوت آج
گوہ گراں جو غم کا وہ دے کر چلے گئے

مرشد تھے پیر تھے جو مقرر تھے بے مثال
حامد وہ دلنواز ،سخنور چلے گئے

حامد حسین

Previous articleغزل
Next articleمنوررانا کی کتاب ’’ماں‘‘

اپنے خیالات کا اظہار کریں

Please enter your comment!
Please enter your name here