سپریم کورٹ کا تاریخ ساز فیصلہ!

0
589

بغاوت کےقانون پرنظرثانی تک کسی کےخلاف ایف آئی آر نہیں، موجودہ ملزمان بھی ضمانت کی درخواست دیں: سپریم کورٹ کا تاریخی فیصلہ۔

غداری قانون سے متعلق جاری سماعت کے دوران سپریم کورٹ Supreme Court نے بڑا فیصلہ سنایا ہے۔ سپریم کورٹ نے کہا ہے کہ جو لوگ اس قانون کی دفعہ 124A کے تحت جیل میں بند ہیں، وہ ضمانت کے لیے عدالت میں جائیں۔ اس سے قبل، سالیسٹر جنرل نے کہا کہ حکومت پولیس کو بغاوت کی دفعات کے تحت قابلِ سماعت جرائم کے اندراج سے نہیں روک سکتی، لیکن 124A کے مقدمات کسی قابل افسر (ایس پی رینک) کی سفارش کے بعد ہی درج کیے جانے چاہئیں۔ یہ کیا جا سکتا ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ زیر التوا بغاوت کے مقدمات کا جائزہ لیا جا سکتا ہے۔ 124A کے تحت درج مقدمات میں جلد از جلد ضمانت پر غور کیا جا سکتا ہے۔

سپریم کورٹ نے اس کیس کے بارے میں تین اہم باتیں کہیں۔ فی الحال اس معاملے میں کوئی مقدمہ درج نہیں کیا جائے گا۔ دوسرے زیر التوا مقدمات میں اس دفعہ کے تحت جو مقدمات درج ہیں انہیں ٹھنڈے بستے میں رکھا جائے گا۔ یہ تمام احکامات اس وقت تک نافذ رہیں گے جب تک عدالت کوئی مزید حکم نہیں دیتی یا حکومت اس پر کوئی فیصلہ نہیں لیتی۔

بدھ کو ایک بڑا فیصلہ سناتے ہوئے سپریم کورٹ نےغداری قانو کے تحت کسی بھی نئے کیس کے اندراج پر روک لگا دی۔ چیف جسٹس این وی رمنا کی بنچ نے مرکزی حکومت کو سیڈیشن ایکٹ کی دفعہ 124 اے پر نظر ثانی کرنے کی اجازت دیتے ہوئے کہا کہ اس وقت تک اس پروویژن کا استعمال کرنا مناسب نہیں ہوگا۔ جب تک یہ جائزہ لینے کا عمل مکمل نہیں ہو جاتا۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ نہ تو مرکز اور نہ ہی ریاستی حکومت اس کے تحت مقدمہ درج کرے گی جب تک کہ 124A پر دوبارہ غور کرنے کا عمل مکمل نہیں ہو جاتا۔ عدالت نے یہ بھی کہا کہ جو لوگ 124 اے کے تحت جیل میں ہیں، وہ ضمانت کے لیے عدالت جائیں۔

Previous articleاعظم خان کو ملی بڑی راحت!
Next articleوزیر تعلیم نے دیا بڑا بیان!

اپنے خیالات کا اظہار کریں

Please enter your comment!
Please enter your name here