حیران کن: لوگوں نے دھکا دے کر چلادی ٹرین۔ویڈیو آیا سامنے!

0
606

سہارنپور دہلی ٹرین میں آگ: میرٹھ کے دورالا میں ہفتہ کی صبح ایک بڑا حادثہ ٹل گیا جب سہارنپور سے دہلی جانے والی مسافر ٹرین میں آگ لگ گئی اور لوگ بروقت ٹرین سے نیچے اتر گئے۔ ٹرین سے اٹھنے والے شعلوں نے لوگوں میں خوف و ہراس پھیلا دیا۔

مسافر ٹرین کی دو بوگیوں اور انجن میں آگ لگنے کے بعد باقی کوچ کو کاٹ کر الگ کر دیا گیا۔ اس دوران مسافروں نے اسے دھکا دے کر پوری ٹرین کو آگ کی لپیٹ میں آنے سے بچا لیا۔

سہارنپور سے دہلی جانے والی مسافر ٹرین ہفتہ کی صبح دورالا ریلوے اسٹیشن پہنچی، دورالہ ریلوے اسٹیشن پہنچنے سے پہلے ہی 2 بوگیوں اور انجن میں آگ لگ گئی، جس کے بعد ٹرین کو دورالہ اسٹیشن پر روک دیا گیا، ٹرین سے اتر گئی۔ اس دوران مسافروں نے سمجھداری کا مظاہرہ کیا اور ریلوے ملازمین کے ساتھ مل کر ٹرین کی دیگر بوگیوں کو آگ لگنے سے نکال کر منزل کی طرف دھکیل دیا، اس طرح ٹرین کی دیگر بوگیاں آگ کی لپیٹ میں آنے سے بچ گئیں۔

اتحاد میں طاقت ہے
بھاری ٹرین کو کھینچنا یا دھکیلنا ناقابل تصور لگتا ہے۔ لیکن جب سینکڑوں لوگوں نے ایک ساتھ اپنی طاقت ایک ہی سمت میں ڈالی تو پوری ٹرین کو لوگوں نے اس طرح کھینچ لیا جیسے وہ کسی کار یا آٹو کو دھکیل رہے ہوں۔ یہ ویڈیو سوشل میڈیا پر بھی وائرل ہو رہا ہے اور لوگ اسے اتحاد کی طاقت بتا رہے ہیں۔

آگ شارٹ سرکٹ کے باعث لگی
ریلوے کے سرکاری ذرائع نے بتایا کہ آگ غالباً شارٹ سرکٹ کی وجہ سے لگی، لیکن جیسے ہی ٹرین دورالہ اسٹیشن پر کھڑی تھی، آگ پر فوری طور پر قابو پالیا گیا۔ کوئی جانی نقصان نہیں ہوا کیونکہ تمام مسافر کوچوں سے باہر نکل گئے اور چوکسی کی وجہ سے بڑا حادثہ ٹل گیا۔ پولیس کے مطابق سہارنپور مسافر کو صبح 7.10 بجے دورالا اسٹیشن پہنچنا تھا اور عام طور پر روزانہ مسافر اسٹیشن پر موجود ہوتے تھے۔ اسٹیشن پر پہنچتے ہی ٹرین کے دو ڈبوں سے اچانک دھواں نکلتا ہوا دیکھا گیا۔

بھگدڑ جیسی صورتحال
ریلوے حکام نے فوری طور پر آگ سے متاثرہ دونوں کوچوں سے مسافروں کو نکالنے کا کام کیا۔ اگرچہ موقع پر بھگدڑ جیسی صورتحال پیدا ہوگئی تاہم تمام مسافروں کو بحفاظت باہر نکال لیا گیا۔ بتایا گیا ہے کہ تیز ہوا کے باعث فائر فائٹرز کو آگ بجھانے میں کافی مشقت کرنی پڑی۔ اس کی وجہ سے میرٹھ-سہارنپور ریلوے روٹ متاثر ہوا اور کئی اہم ٹرینیں متاثر ہوئیں۔ ان میں دہلی دہرادون شتابدی ایکسپریس، شالیمار ایکسپریس اور نوچندی ایکسپریس جیسی ٹرینیں شامل تھیں۔

Previous articleیوکرین __اسلحوں کی نئی تجربہ گاہ
Next articleمولانا جلال الدین نے حیرت انگیز کارنامہ انجام دیا!

اپنے خیالات کا اظہار کریں

Please enter your comment!
Please enter your name here