ایک ای میل میں، NDTV نے اطلاع دی، “یہ NDTV کے لیے بہت برا دن

0
332

اتر پردیش کے سینئر صحافی کمال خان انتقال کر گئے۔ 61 سالہ کمال خان کو جمعہ کی صبح تقریباً 7.30 بجے دل کا دورہ پڑا۔ وہ اپنے پیچھے بیوی روچی اور بیٹا امان چھوڑ گئے ہیں۔ خان این ڈی ٹی وی کے ایگزیکٹو ایڈیٹر تھے۔ انہیں صحافت میں ان کی شاندار خدمات کے لئے رام ناتھ گوئنکا اور صدر جمہوریہ کے ہاتھوں گنیش شنکر ودیارتھی ایوارڈ ملا۔

ایک ای میل میں، NDTV نے اطلاع دی، “یہ NDTV کے لیے بہت برا دن ہے۔ ہم نے کمال خان کو کھو دیا ہے۔ وہ 61 برس کے تھے اور ہمارے لکھنؤ بیورو کے روح رواں تھے۔ این ڈی ٹی وی کے ایک تجربہ کار کے پاس ان سے ملنے والوں کے لیے لامحدود وقت اور مہربان الفاظ تھے۔” چینل نے کہا کہ وہ ایک حیرت انگیز شخص تھے۔

کمال خان دو دہائیوں سے صحافت سے وابستہ تھے۔ پرنٹ میڈیا میں طویل قیام کے بعد انہوں نے اپنے ٹی وی کیریئر کا آغاز این ڈی ٹی وی سے کیا اور آخر تک چینل سے وابستہ رہے۔ وہ خبریں پیش کرنے کے اپنے مخصوص انداز اور زبان کی وجہ سے بہت مشہور تھے۔

کمال خان کے انتقال سے صحافت کی دنیا میں سوگ کی لہر ہے۔ کمال خان کے پرانے دوست اور سینئر صحافی شراون کمار شکلا نے کمال خان کے اچانک انتقال پر دکھ اور صدمے کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ کمال ان کے نام کی طرح ایک شاندار انسان تھے۔ وہ بہت سادہ اور آسان انسان تھے۔

سیاسی جماعتوں اور رہنماؤں نے بھی کمال خان کے انتقال پر دکھ کا اظہار کیا ہے۔ مرکزی وزیر ہردیپ سنگھ پوری نے بھی غم کا اظہار کیا اور اہل خانہ اور پیاروں سے تعزیت کا اظہار کیا۔

سماج وادی پارٹی نے ٹویٹ کیا، ’’بہت افسوسناک! این ڈی ٹی وی کے سینئر نامہ نگار جناب کمال خان صاحب کو ناقابل تلافی نقصان۔ مرحوم کی روح کو سکون ملے۔ سوگوار خاندان کے افراد سے گہری تعزیت۔ دلی خراج تحسین۔”

غم کا اظہار کرتے ہوئے، بی ایس پی سپریمو مایاوتی نے ٹویٹ کیا، “این ڈی ٹی وی سے وابستہ معروف اور معروف ٹی وی صحافی کمال خان کے اچانک انتقال کی خبر صحافت کی دنیا کے لیے انتہائی افسوسناک اور ناقابل تلافی نقصان ہے۔ ان کے خاندان اور ان کے تمام چاہنے والوں کے ساتھ میری گہری تعزیت۔ قدرت سب کو اس دکھ کو برداشت کرنے کی طاقت دے، ایسی قدرت سے دعا ہے۔

Previous articleاسلام کا تصور توحید اور سوریہ نمسکار
Next articleلاکھ سے زیادہ امیدواروں کوملے گاروزگار،جانئےتفصیلات؟

اپنے خیالات کا اظہار کریں

Please enter your comment!
Please enter your name here