لفظوں میں تِرے حسن کی تنویر بسا لوں

0
92

لفظوں میں تِرے حسن کی تنویر بسا لوں
اے کاش کہ اشعار کی توقیر بڑھا لوں

خوش بو سے تراشوں میں ترے حسن کا پیکر
رنگوں سے گلوں کے تِری تصویر بنا لوں

وہ خواب دے مجھ کو جو مِری نیند اُڑا دے
وہ عزم کہ ہر خواب کی تعبیر چُرا لوں

ظالم سے لڑوں گا میں قلم ہاتھ میں لے کر
دشمن کی یہ کوشش ہے کہ شمشیر اُٹھا لوں

کس طرح ملاقات کی نکلے کوئی صورت
کس طرح میں سوئی ہوئی تقدیر جگا لوں

جب دل سے نکلتا ہی نہیں خوف تو راغبؔ
کیا گردن و پا میں پڑی زنجیر نکالوں

شاعر: افتخار راغب

Previous articleبہار میں اساتذہ اور لائیبریرین کے تبادلے کو ملی منظوری
Next articleاردو ظرافت پر تنقید کا مسئلہ

اپنے خیالات کا اظہار کریں

Please enter your comment!
Please enter your name here